سلگا رہی ہیں سرد ہوائیں ترا خیال

شعیب بخاری

چائے کے ساتھ ساتھ یہ باتیں ترا خیال
سلگا رہی ہیں سرد ہوائیں ترا خیال

اس سے حسین تر تو کوئی زندگی نہیں
شاموں کا یہ سکوت یہ غزلیں ترا خیال

وارفتگی کے وجد میں گھنگھرو بکھر گئے
رقصاں ہوا جو کھول کے زلفیں ترا خیال

کمرے کے انتشار میں الجھے ملیں گے ہم
ہم سے لپیٹتا ہو جو بانہیں ترا خیال

کیا کیا برائے رخت سفر مل گیا ہمیں
کاغذ قلم شراب کتابیں ترا خیال

سوچا ہے چاند کو بھی اتاریں زمین پر
ممکن ہو جس طرح بھی سجائیں ترا خیال

وحشت بتا رہی ہے ہمیں ڈھونڈتے رہے
آوارگی اداس سی راتیں ترا خیال

پھر دھوپ چاٹ لے گی شب مہرباں تجھے
دیتا رہے گا ہم کو صدائیں ترا خیال

ہم کو بھی اپنے قرب کی خوشبو میں ڈھانپ لے
پھولوں کو بخشتا ہے عبائیں ترا خیال

آنکھوں سے دیکھ لیں گے چھلکتا ہوا اسے
ہم دوستوں سے کتنا چھپائیں ترا خیال

ہم پہ ہے سہل سجدہء مقتل ! نصیب ہیں
تیرے جنوں کی ساری اذانیں ترا خیال

شاہ جی زوال شب کا تقاضا ہے واپسی
وحشت سے گھورتی ہیں یہ راہیں ترا خیال

شعیب بخاری



Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*