توھِینِ آدمیت

ھے توھِینِ آدمیت، اِنسان کو غُلام رکھنا،
سبقِ اوّل ھے، اِنسانیت کا احترام رکھنا۔

شِکستِ مُسلسل سے، سیکھے ھیں یہ ھُنر،
مُسکرا کر دِل میں، غم کا کہرام رکھنا۔

تھا اپنے بَچّوں سے مُخاطِب ایک شاھین،
جھپٹ کر زمین پر، بُلند پھر مُقام رکھنا۔

آ ھی جائے گا کوئی، بَھٹکا ھُوا مُسافِر،
دَروازہِ دِل کُھلا، صُبح و شام رکھنا۔

دِل میں چُھپا کر اقبال، بھید لاکھوں،
تحریر آنکھوں میں کوئی، بے نام رکھنا۔

*اِقبال اَحمد پَسوال*



Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*