مفلسی

کتنا   گرایا   ھے  مفلسی   نے
در,در  پھرایا ھے مفلسی   نے
۔۔۔۔۔۔
دکھ درد  دیکر  فا قہ  کشی  کا
کاسہ  تھمایا   ھے  مفلسی   نے
۔۔۔۔۔۔
معصوم  بچوں  کو  آج  میرے
بھوکا  سلایا   ھے  مفلسی  نے
۔۔۔۔۔۔
ھم زندگی کےڈھب سیکھتے تھے
مرنا  سکھایا  ھے  مفلسی    نے
۔۔۔۔۔۔
چت کرنا تیرےبس میں نہیں تھا
مجھ  کو  گرایا  ھے  مفلسی   نے
۔۔۔۔۔۔۔۔
کب چھوڑ دے گی یہ جان میری ؟
ڈیرہ  جمایا ,  ھے  مفلسی   نے   !
۔۔۔۔۔۔
ھم بدنصیبوں کو اے خوش نصیبو!
بے  حد   رلایا   ھے   مفلسی    نے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صارم    ہمیں    اپنی   زندگی   کا
دشمن   بنایا   ھے   مفلسی    نے
۔۔۔۔۔۔۔
صارم ملک
چئرمین
حصارِ ادب عالمی




Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*