ھوائیں

*ھَواؤں میں اُڑنے کے شوق میں، یہ مَت بُھولئیے،*
*ھوائیں بُلندی پہ لے جا کر، پٹخ دیتی ھیں*.

*اِقبال اَحمد پَسوال*

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*