اے میرے خدا ۔۔۔۔ تیرا شکریہ

ڈاکٹر محمد اعظم رضا تبسم

شکرکی نماز شکوے کی نماز سے طاقتور ہوتی ہے ۔
ہم خدا سے جتنے شکوے کرتے ہیں ان کا نصف وقت بھی شکر ادا کرنے میں گزرے تو ہماری نعمتوں میں اضافہ ہو جاۓ ۔نعمتوں کے شکر کے ثمرات پر ڈاکٹر محمد اعظم رضا تبسم کی منفرد تحریر ۔۔۔۔۔۔ پڑھیے اور شٸیر کیجیے
۔۔۔۔۔ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻭﻗﺖ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺯﯾﺮ ﺧﺎﺹ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ :
ﯾﮧ ﻣﯿﺮﮮ ﻧﻮﮐﺮ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮐﯿﺴﮯ ﺧﻮﺵ ﺑﺎﺵ ﭘﮭﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺟﺒﮑﮧ ﺍﻥ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﻭﺭ
ﻣﯿﺮﮮ ﭘﺎﺱ ﮐﻤﯽ ﮐﺴﯽ ﭼﯿﺰ ﮐﯽ ﻧﮩﯿﮟ۔
ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ : ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺳﻼﻣﺖ، ﺍﭘﻨﮯ ﮐﺴﯽ ﺧﺎﺩﻡ ﭘﺮ
“ﻗﺎﻧﻮﻥ ﻧﻤﺒﺮ ﻧﻨﺎﻧﻮﮮ”
ﮐﺎ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﯿﺌﮯ۔
ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ :
ﺍﭼﮭﺎ، ﯾﮧ “ﻗﺎﻧﻮﻥ ﻧﻤﺒﺮ ﻧﻨﺎﻧﻮﮮ” ﮐﯿﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ؟
ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ :
ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺳﻼﻣﺖ، ﺍﯾﮏ ﺻﺮﺍﺣﯽ ﻣﯿﮟ ﻧﻨﺎﻧﻮﮮ ﺩﺭﮨﻢ ﮈﺍﻝ ﮐﺮ،
ﺻﺮﺍﺣﯽ ﭘﺮ ﻟﮑﮭﯿﺌﮯ
” ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﻟﯿﺌﮯ ﺳﻮ ﺩﺭﮨﻢ ﮨﺪﯾﮧ ﮨﮯ ”
ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﮐﺴﯽ ﺧﺎﺩﻡ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﮐﮯ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺭﮐﮫ ﮐﺮ،
ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﮐﮭﭩﮑﮭﭩﺎ ﮐﺮ،
ﺍﺩﮬﺮ ﺍُﺩﮬﺮ ﭼﮭﭗ ﺟﺎﺋﯿﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﺎﺷﮧ ﺩﯾﮑﮫ ﻟﯿﺠﯿﺌﮯ۔
ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻧﮯ، ﺟﯿﺴﮯ ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﺳﻤﺠﮭﺎﯾﺎ ﺗﮭﺎ، ﻭﯾﺴﮯ ہی ﮐﯿﺎ،
ﺻﺮﺍﺣﯽ ﺭﮐﮭﻨﮯ
ﻭﺍﻟﮯ ﻧﮯ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﮐﮭﭩﮑﮭﭩﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﭼﮭﭗ ﮐﺮ ﺗﻤﺎﺷﮧ ﺩﯾﮑﮭﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺩﯾﺎ۔
ﺍﻧﺪﺭ ﺳﮯ ﺧﺎﺩﻡ ﻧﮑﻼ، ﺻﺮﺍﺣﯽ ﺍﭨﮭﺎﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﮔﮭﺮ ﭼﻼ ﮔﯿﺎ۔
ﺩﺭﮨﻢ ﮔﻨﮯ ﺗﻮ
ﻧﻨﺎﻧﻮﮮ ﻧﮑﻠﮯ، ﺟﺒﮑﮧ ﺻﺮﺍﺣﯽ ﭘﺮ ﻟﮑﮭﺎ “ﺳﻮ ﺩﺭﮨﻢ”ﺗﮭﺎ۔
ﺳﻮﭼﺎ : ﯾﻘﯿﻨﺎ ﺍﯾﮏ
ﺩﺭﮨﻢ ﮐﮩﯿﮟ ﺑﺎﮨﺮ ﮔﺮﺍ ﭘﮍﺍ ﮨﻮﮔﺎ۔
ﺧﺎﺩﻡ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺭﮮ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮑﻠﮯ ﺍﻭﺭ ﺩﺭﮨﻢ ﮐﯽ ﺗﻼﺵ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯼ۔ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺳﺎﺭﯼ ﺭﺍﺕ ﺍﺳﯽ ﺗﻼﺵ ﻣﯿﮟ ﮔﺰﺭ ﮔﺌﯽ۔
ﺧﺎﺩﻡ ﮐﺎ ﻏﺼﮧ ﺩﯾﺪﻧﯽ ﺗﮭﺎ، ﮐﭽﮫ ﺭﺍﺕ ﺻﺒﺮ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﻗﯽ ﮐﯽ ﺭﺍﺕ ﺑﮏ ﺑﮏ ﺍﻭﺭ ﺟﮭﮏ
ﺟﮭﮏ ﻣﯿﮟ ﮔﺰﺭﯼ۔ ﺧﺎﺩﻡ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﯿﻮﯼ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﻮ ﺳﺴﺖ ﺑﮭﯽ ﮐﮩﺎ
ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻭﮦ ﺩﺭﮨﻢ ﺗﻼﺵ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔
ﺩﻭﺳﺮ ﮮﺩﻥ ﯾﮧ ﻣﻼﺯﻡ ﻣﺤﻞ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻣﺰﺍﺝ……
ﻣﮑﺪﺭ، ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺟﮕﺮﺍﺗﮯ، ﮐﺎﻡ ﺳﮯ ﺟﮭﻨﺠﮭﻼﮨﭧ، ﺷﮑﻞ ﭘﺮ ﺍﻓﺴﺮﺩﮔﯽﻋﯿﺎﮞ ﺗﮭﯽ۔
ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺳﻤﺠﮫ ﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﻧﻨﺎﻧﻮﮮ ﮐﺎ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮐﯿﺎ ﮨﻮﺍ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﻟﻮﮒ ﺍﻥ ﻧﻨﺎﻧﻮﮮ ﻧﻌﻤﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﻮﻝ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﺍﻟﻠﻪ ﺗﺒﺎﺭﮎﻭﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﻧﮯﺍﻧﮩﯿﮟ ﻋﻄﺎ ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ۔
ﺍﻭﺭ ﺳﺎﺭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺍﺱ ﺍﯾﮏ ﻧﻌﻤﺖ ﮐﮯ
ﺣﺼﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﺳﺮ ﮔﺮﺩﺍﮞ ﺭﮦ ﮐﺮ ﮔﺰﺍﺭ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﯽ ﮨﻮﺗﯽ۔
ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻭﺍﻟﯽ ﺭﮦ ﮔﺌﯽ ﻧﻌﻤﺖ ﺑﮭﯽ ﺍﻟﻠﻪ ﮐﯽ ﮐﺴﯽ ﺣﮑﻤﺖ کی ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺭُﮐﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ……
ﺟﺴﮯ ﻋﻄﺎ ﮐﺮ ﺩﯾﻨﺎ ﺍﻟﻠﻪ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺑﮍﺍ ﮐﺎﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺍ ﮐﺮﺗﺎ۔




ﻟﻮﮒ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﺳﯽ ﺍﯾﮏ ﻣﻔﻘﻮﺩ ﻧﻌﻤﺖ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺳﺮﮔﺮﺩﺍﮞ ﺭﮦ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﺎﺱ
ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻧﻨﺎﻧﻮﮮ ﻧﻌﻤﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﻟﺬﺗﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﻣﺰﺍﺟﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﮑﺪﺭ ﮐﺮﮐﮯ ﺟﯿﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔
ﺍﭘﻨﯽ ﻧﻨﺎﻧﻮﮮ ﻣﻞ ﭼﮑﯽ ﻧﻌﻤﺘﻮﮞ ﭘﺮ ﺍﻟﻠﻪ ﺗﺒﺎﺭﮎ ﻭ ﺗﻌﺎﻟٰﯽ ﮐﺎ ﺍﺣﺴﺎﻥ ﻣﺎﻧﯿﺌﮯ
ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﺳﮯ ﻣﺴﺘﻔﯿﺪ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺷﮑﺮﮔﺰﺍﺭ ﺑﻨﺪﮮ ﺑﻦ ﮐﺮ ﺭﮨﯿﺌﮯ۔ فارمولا سیدھا اور سادہ سا ہے اللہ نے کہا ہے اگر تم میری نعمتوں کا شکر ادا کر تو میں ان میں اضافہ کردوں ۔ شیخ سعدی کے پاس جوتا نہیں تھا۔مسجد میں گیۓ نماز ادا کی اور شکوہ کیا اللہ میں تیری اتنی عبادت کرتا ہوں تو نے مجھے جوتا نہیں دیا ۔باہرنکلے تو ایک آدمی کو دیکھا کہ اس کے پاوں نہیں فورا واپس آۓ اور توبہ کی کہ شکر ہے اللہ تو نے مجھے پاوں تو دیے ہیں ۔ اللہ کریم ہے کرم کرتا ہے اسے شکریہ بہت پسند ہے شکریہ ادا کیا کریں ۔ آپ کسی کو بھی شکریہ بولیں وہ آپ کےساتھ مزید نیکی کرے گا اسی طرح اللہ کی محبت اور اس کا خدا ہونا اس بات کا حق رکھتا ہے کہ اس کاشکریہ ادا کیا اۓ اس کو Thanks بولا جاۓ ۔زبان سے بھی عمل سے بھی ۔ تا کہ وہ خوش ہوکے جس طرح میں اپنے اس بندے سے پیار کرتا ہوں یہ بندہ بھی مجھ سے پیار کرتا ہے اس طرح وہ خوش ہو کر نعمتوں میں اضافہ کر دے گا۔
اللّه ﭘﺎﮎﮨﻤﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺷﮑﺮ ﮔﺰﺍﺭ بندوں میں شامل فرما دے۔ ڈاکٹر محمد اعظم رضا تبسم ۔
اسلام تیرا دیس ھے تو مصطفوی ھے
اس تحریر کو کاپی کرتے ہوئے آگے بڑھائیے۔ڈاکٹر محمد اعظم رضا تبسم . اچھی بات اگے پھیلانا بھی صدقہ ہے .. شکریہ … ہمارے پیج کا لنک دستیاب ہے …https://www.facebook.com/Dr.M.AzamRazaTabassum/
ڈاکٹر صاحب کی تحریریں .واٹس ایپ پہ حاصل کرنے کے لیے .ہمیں اپنا نام .شہر کا نام اور جاب لکھ کر اس نمبر پر میسج کریں . 03317640164.
شکریہ .ٹیم نالج فارلرن.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*