*سُن سانسوں کے سلطان پیا*

*سُن سانسوں کے سلطان پیا*
*ترے ہاتھ میں میری جان پیا*
*میں تیرے بن ویران پیا*
*تو میرا کُل جہان پیا*

*مری ہستی، مان، سمان بھی تو*
*مرا زھد، ذکر، وجدان بھی تو*
*مرا، کعبہ، تھل، مکران بھی تو*
*میرے سپنوں کا سلطان بھی تو*

*کبھی تیر ہوئی، تلوار ہوئی*
*ترے ہجر میں آ بیمار ہوئی*
*کب میں تیری سردار ہوئی*
*میں ضبط کی چیخ پکار ہوئی*

*مرا لوں لوں تجھے بلائے وے*
*مری جان وچھوڑا کھائے وے*
*ترا ہجر بڑا بے درد سجن*
*مری جان پہ بن بن آئے وے*

*مری ساری سکھیاں روٹھ گئیں*
*مری رو رو اکھیاں پھوٹ گئیں*
*تجھے ڈھونڈ تھکی نگری نگری*
*اب ساری آسیں ٹوٹ گئیں*

*کبھی میری عرضی مان پیا*
*میں چپ، گم صم، سنسان پیا*
*میں ازلوں سے نادان پیا*
*تو میرا کُل جہاں پیا*

*” زین شکیل “*



Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*