نعتِ پاک

​مصرعہ طرح​
​ذاتِ نبی بلند ہے ذاتِ خدا کے بعد​

​آیا نہیں نبی کوئی مصطفیٰ کے بعد​
​ذاتِ نبی بلند ہے ذاتِ خدا کے بعد​

​یہ کہکشاں یہ چاند یہ تارے یہ دوجہاں​
​پڑھتے ہیں نعت سارے ہی حمد و ثنا کے بعد​

​دل میں تڑپ ہے دیکھوں میں شہر نبی پاک​
​یہ چشم تر بھی پیش ہی دست دعا کے بعد​

​آؤ کہ چوم لیں در خیر الوری کا سنگ​
​حاجت کوئی نہیں ہے در مصطفے کے بعد​

​معراج کی امامت کبری تو دیکھئے​
​ہر اک نبی؛رسول ہے خیر الوری کے بعد​

​امت رہین کیوں نہ ہو ابن علی تری​
​ہر ظلم دب گیا ہے ترے کربلا کے بعد​

​لکھتا ہوں نعت شوق سے صابر میں کم سخن​
​کچھ اور کرنا ہے تو کیا اس ادا کے بعد​

​شاعر​
​محمد صابر علی قریشی
شکستِ حیات




Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*